بریگزٹ معاہدے کے بعد وزراء کے استعفوں کا انبار۔

  • 49
  •  
  •  
  •  
  •  
    49
    Shares

تفصیلات کے مطابق برطانیہ اور یورپی یونین کے درمیان برطانیہ کے یورپی یونین سے علیحدہ ہونے کے معاہدے کے بعد برطانیہ میں وزراء نے استعفے دینے شروع کر دئے۔

اس سلسلے میں وزیر جس کے پاس یورپی یونین سے برطانیہ کے انخلاء کی فائل تھی(ڈومنک راپ) نے استعفی دے دیا۔مشرقی آئرلینڈ کے حوالے سے وزیر “شیلیخ وارہ” نے بھی استعفی دے دیا۔اس کے علاوہ لیبر اور پینشن کے وزیر “ایستھر میکوی” نے بھی اپنا استعفیٰ پیش کردیا۔

وزراء کے استعفوں کا مقصد بریگزٹ کے معاملے پر احتجاج کرنا ہے۔

جب” راپ” سے پوچھا گیا کہ انہوں نے استعفی کیوں دیا ہےتو” راپ” نے بتایا کہ جن شرائط پر یورپی یونین اور برطانیہ کے ایگزیکٹ کے بارے میں معاہدہ ہوا ہے وہ قابل قبول نہیں ہے۔جبکہ دوسری وجہ یہ ہے کہ برطانیہ کے انخلاء کے حوالے سے یورپی یونین کو” ویٹو “کا اختیار دینا کسی صورت بھی قابل قبول نہیں۔

مشرقی آئرلینڈ کے حوالے سے وزیر” شلائش وارہ”۔کا کہنا تھا کہ معاہدہ برطانیہ کی خودمختاری اور آزادی کے خلاف ہے۔

یورپی یونین کا مقصد واضح تھا کہ وہ پراسس کو آہستہ سے چلانا چاہتے تھے اور ہر ممکن طریقے سے برطانیہ کو یورپی یونین میں رکھنا چاہتے تھے ۔

وزیر اعظم” تھریسا مے” کی گورنمنٹ سے ان وزراء کے استعفوں کا مقصد گورنمنٹ سے احتجاج کرنا ہے تا کہ وہ یورپی یونین سے انخلاء کے معاہدے کو ختم کر د یں۔

دوسری صورت میں معاہدہ اس طرح کا ہو جس سے برطانیہ کی خودمختاری اور آزادی پر آنچ نہ آئے اور یورپی یونین کو دیا جانے والا ویٹو کا اختیار بھی واپس لیا جائے۔


  • 49
  •  
  •  
  •  
  •  
    49
    Shares

اترك تعليقاً

This site is protected by wp-copyrightpro.com