جرمن عجائب گھر میں ڈکیتی، قیمتی نوادرات چوری

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

ڈکیتی کی یہ واردات مشرقی جرمن شہر ڈریسڈن کے ایک میوزیم میں پیر پچیس نومبر کی صبح ہوئی۔ پولیس نے قیمتی نوادرات چوری کر لیے جانے کی تصدیق کر دی ہے۔

ڈریسڈن کے میوزیم گرین والٹ (گرُوئنس گیوؤلبے) کو یہ اعزاز حاصل ہے کہ وہ ان یورپی عجائب گھروں میں شمار ہوتا ہے جہاں قیمتی نوادرات کا ایک وسیع ذخیرہ محفوظ ہے۔ اس عجائب گھر میں نصب سی سی ٹی وی کیمروں میں دیکھا گیا کہ دو چور ایک کھڑکی سے اندر داخل ہوئے اور پھر واردات مکمل کرنے کے بعد ایک گاڑی میں فرار ہونے میں کامیاب ہو گئے۔

پولیس کا اندازہ ہے کہ اس ڈکیتی میں دو سے زائد افراد ملوث ہو سکتے ہیں۔ یہ بھی بتایا گیا ہے کہ اس واردات کے دوران چوروں نے اپنی توجہ میوزیم کے اس حصے پر مرکوز رکھی، جہاں بہت قیمتی تاریخی اشیاء رکھی گئی تھیں۔ تفتیش کاروں کے مطابق چور اٹھارہویں صدی کے بیش قیمت زیورات کے کم از کم تین سیٹ چرانے میں کامیاب رہے۔

گرین والٹ عجائب گھر کا تاریخی حصہ دو حصوں میں منقسم ہے۔ ان میں سے ایک میں اٹھارہویں صدی کے پولستانی بادشاہ آگُسٹس دوم کے دور کی اشیاء رکھی ہوئی ہے۔ اس تاریخی حصے کے دوسرے چیمبر میں مختلف لوگوں کی عطیہ کردہ قیمتی اشیاء سجائی گئی ہیں اور یہ حصہ قدرے نیا ہے۔

پولیس کے مطابق چوری سے قبل نقب زنوں نے آگ سے بچانے والے نظام کو بھی نقصان پہنچایا اور بجلی کے نظام کو بھی مفلوج کر دیا، جس کے بعد یہ میوزیم اندر سے اندھیرے میں ڈوب گیا۔ اس اندھیرے کی وجہ سے سی سی ٹی وی فوٹیج کا تجزیہ کرنے میں ماہرین کو شدید مشکلات کا سامنا ہے۔


  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

اترك تعليقاً

This site is protected by wp-copyrightpro.com