نو ماہ میں 81 ہزار تارکین وطن بحیرہ روم کے راستے یورپ پہنچے

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

سال رواں کے پہلے نو ماہ کے دوران بحیرہ روم کے راستے یورپ پہنچنے والے تارکین وطن کی تعداد اکیاسی ہزار رہی، جن میں سے تقریباﹰ ایک چوتھائی بچے ہیں۔ یہ بات اقوام متحدہ کے ادارہ برائے مہاجرین کی ایک نئی رپورٹ میں کہی گئی ہے

اقوام متحدہ کے ادارہ برائے مہاجرین (یو این ایچ سی آر) کی یہ رپورٹ اسی ہفتے جاری کی گئی اور اس کا عنوان ہے: ‘ناامیدی میں کیے جانے والے سفر۔‘‘ اس رپورٹ کے مطابق زیادہ تر شمالی افریقہ سے بحیرہ روم کے راستے اس سال جنوری سے ستمبر کے آخر تک یورپی یونین کے مختلف رکن ممالک میں پہنچنے والے پناہ کے خواہش مند تارکین وطن کی تعداد 81 ہزار سے تجاوز کر چکی تھی

اس کے برعکس گزشتہ برس کے انہی نو ماہ کے دوران پناہ کی تلاش میں بحیرہ روم کے راستے انتہائی پرخطر سفر کر کے یورپ پہنچنے والے تارکین وطن کی تعداد ایک لاکھ تین ہزار رہی تھی۔

یو این ایچ سی آر کے یورپی دفتر کی ڈائریکٹر پاسکال مورو نے نیوز ایجنسی کے این اے کو بتایا کہ 2019ء کے پہلے نو ماہ کے دوران جو اکیاسی ہزار تارکین وطن یورپ پہنچے، ان میں سے تقریباﹰ ایک چوتھائی بچے تھے۔

مزید یہ کہ ان نابالغ تارکین وطن میں سے بہت سے ایسے بھی تھے، جو اپنے والدین کے بغیر اکیلے ہی یورپ پہنچے۔

اقوام متحدہ کے ادارہ برائے مہاجرین کی اس اعلیٰ یورپی عہدیدار نے کہا کہ ایسےکم عمر تارکین وطن کی تکالیف یورپی سرحدوں پر بھی ختم نہیں ہوتیں۔

پاسکال مورو کے مطابق مختلف یورپی ممالک میں ان کم عمر مہاجرین اور تارکین وطن کو زیادہ تر ایسے بڑے بڑے مراکز میں رکھاجاتا ہے، جہاں ان کی مؤثر حفاظت نہیں ہو سکتی اور اسی لیے وہاں ان بچوں کا جنسی اور جسمانی استحصال بھی ہوتا ہے اور انہیں تشدد کے علاوہ بہت زیادہ تفسیاتی دباؤ کا سامنا بھی کرنا پڑتا ہے۔


  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

اترك تعليقاً

This site is protected by wp-copyrightpro.com