42 مہاجرین کو سمندر میں ڈوبنے سے بچانے والی بہادر جرمن خاتون کو اٹلی میں سزا۔

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

اٹلی میں سی واچ کی کشتی بیالیس پناہ گزینوں کو لیکر داخل ہوگئی ہے ۔ تہذیب یافتہ یورپی حکومتوں نے ان انسانوں کو موت کے منہ میں دھکیلنے میں کوئی کسر نہیں چھوڑی تھی ۔

گزشتہ کئی دنوں سے انہیں سمندر میں محصور کر رکھا تھا ۔ لیکن ان کی زندگی اور موت کے درمیان صرف ایک عورت آکر کھڑی ہوگئی جسے فرشتہ بھی نہیں کہا جا سکتا کیونکہ فرشتہ کی اصطلا ح بھی مذکر کی ہے ۔ اسے بہادر اور اس کے عزم کو مردانہ وار بھی نہیں کہا جا سکتا کیونکہ ہمارے تحت الشعور میں یہ صفات مردوں سے مختص ہیں ۔ لیکن اس کا حوصلہ اس کی بہادی اور اس کا بے جھجھک ہونا ایک تاریخ رقم کر گیاہے ۔
کارولا ریکیتے ایک بحری جہاز کی کیپٹن ہیں ۔ یہ جہاز ایک این جی او ”سی واچ “ کی ملکیت ہے یہ این جی او ان پناہ گزینوں کی مدد کرتا ہے جو سمندری راستے سے غیر قانونی طور پر یورپ داخل ہونے کی کوشش میں موت کی وادی کے قریب پہنچ جاتے ہیں یہ این جی او سمندر میں ڈوبنے والے ان انسانوں کو بچا کر یورپ پہنچاتے ہیں ۔

کارولا۔ جرمن شہری ہیں ۔ان کی عمر اکتیس سال ہے وہ ماسٹر ڈگری ہولڈر، پانچ زبانوں میں گفتگو کر سکتی ہیں ۔جرمن کے علاوہ انگلش ، فرنچ ، روسی اور اسپیشن زبان بولتی ہیں ۔ دس سال سے این جی اوز سے وابستہ ہیں ۔ وہ رضا کارانہ تنظیمات میں سب سے توانا اور بہادر آواز ہیں۔ ان کے پاس بحری سائنس اور ماحولیات کی ڈگری ہے ۔

کارولا، سمندر کی بے رحم موجوں میں زندگی کی جنگ لڑنے والے ان بیالیس غیر ملکیوں کوسمندر میں مرنے سے بچا کر اٹلی لانے لگیں تو انہیں اٹلی کی بحری پولیس کی جانب سے روک لیا گیا ۔ انہیں اٹلی کے پانیوں میں تین دن تک محصور رکھا گیا اور انہیں کہا گیا کہ وہ ان غیر ملکیوں کو لیکرلیبیا چلی جائیں یا کسی دوسرے ملک لے جائیں لیکن ان غیر ملکیوں کی حالت نازک تھی اور اٹلی کا ساحل ہی قریب ترین تھا اس لئے وہ اپنی بات پر اڑی رہی ۔

انہیں ڈرایا گیا ۔اٹلی کے نائب وزیر اعظم نے دھمکا یا انہیں پاگل کا خطاب دیا گیا لیکن وہ بالکل نہیں ڈری۔ نہ سمندر سے، نہ غیر ملکیوں کی مدد کرنے سے اور نہ ہی کسی حکومت سے ۔ وہ اپنے عزم کی پکی رہیں جو کہا کر کے دکھا یا ۔

وہ کہنے لگی اگر آپ سمجھتے ہیں کہ گورا پیدا ہونا یا کسی یورپی ملک کا شہری ہونا برتری کی علامت ہے تو پھر ایک برتر کہلانے والا کسی کو موت کے منہ میں کیسے ڈال سکتا ہے ۔ آپ کسی بھی لحاظ سے برتر نہیں ہیں جو ان انسانوں کو مار دینا چاہتے ہیں۔میں انسانوں کو مرتا ہوا نہیں دیکھ سکتی اس جرم کے لئے میں ہر سزا ہر جرمانے ہر جیل جانے کو تیار ہوں ۔

دوسری جانب اٹلی کے نائب وزیر اعظم کو اس بات کی کوئی پرواہ نہیں تھی اس کا کہنا ہے کہ اگر کوئی مرتا ہے تو مرے اور اسے اگر غیر ملکیوں کو روکنے کے لئے بارڈر پردیوار بھی بنانا پڑی تو وہ بنائے گا ۔
سمندر میں تین دن اطالوی پولیس کے روکے جانے کے باوجود وہ نتائج سے بے پرواہ ہو کر اٹلی داخل ہوگئی ہیں اور انہوں نے سب انسانوں کو بچا لیا ہے ۔ کشتی سے نکلنے سے پہلے غیر ملکیوں نے این جی او سی واچ کے نمائندوں کو گلے سے لگا کر ان کا شکریہ ادا کیا ۔

اٹلی کی پولیس نے کشتی کو اپنے قبضے میں لے لیا ہے ۔ اس کشتی کی کیپٹن کارولا راکیتے کو اب اطالوی قانون توڑنے کے جرم میں گرفتار کر لیا گیا ہے جس کے تحت انہیں دس سال قید کی سزا دی جا سکتی ہے ۔

اٹلی کے نائب وزیر اعظم نے اسی سال ایک اضافی قانون وزراءکی کابینہ سے منظور کروا لیا ہے جس کے تحت سمندری راستہ سے غیر قانونی طور پر اٹلی آنے والے غیر ملکیوں کی مدد کرنے والوں کو بیس سے پچاس ہزار یورو تک کا جرمانہ ہو سکتا ہے ۔


  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

اترك تعليقاً

This site is protected by wp-copyrightpro.com