پانچ دنوں میں11 انسانی اسمگلر گرفتار۔

یونان پولیس کے مطابق پچھلے جمعے سے لے کر آج تک انہوں نے گیارہ انسانی اسمگلرز کو گرفتار کیا ہے جو کہ  غیر قانونی تارکین وطن کو ترکی سے یونان منتقل کرنے میں ملوث تھے۔

پولیس نے مختلف جگہوں پر کارروائیاں کرتے ہوئے گیارہ اسمگلرز کو گرفتار کیا ایک کارروائی میں 23 سالہ نوجوان اسمگلر کو جس کا تعلق عراق سے تھا تھیسلونیکی کے قریب گرفتار کر لیا گیا جس کے ساتھ چار غیر قانونی مہاجرین بھی سفر کر رہے تھے یہ لوگ ایوروس سے یونان میں داخل ہوئے اور تھیسلونیکی جا رہے تھے۔

جب مہاجرین سے پوچھ گچھ کی گئی تو انہوں نے بتایا کہ ترکی سے یونان میں داخل ہونے کے لئے انسانی اسمگلر 2000 یورو وصول کر رہے ہیں اور ان کا کام مہاجرین کو تھیسلونیکی پہنچانا ہوتا ہے۔

واضح رہے کہ ترکی اور یونان کے درمیان 2016 میں طے پانے والے معاہدے کے بعد مہاجرین کی یونان منتقلی ایک مشکل امر بن چکی ہے اور انسانی اسمگلر غیر قانونی مہاجرین سے بہت بڑی رقم وصول کر کے انہیں یونان میں پہنچاتے ہیں۔

اسی طرح کی دوسری کارروائیوں میں 6 انسانی اسمگلروں کو  تھیسلونیکی سے گرفتار کیا گیا۔

چار انسانی اسمگلروں کو یونان کے مختلف جزائر سے گرفتار کیا گیا جن کا کام جزیروں میں پہنچنے والے غیر قانونی مہاجرین کو ایتھنز اور دوسرے شہروں میں منتقل کرنا تھا۔

 گرفتار ہونے والے تمام افراد کو جیلوں میں منتقل کیا جا چکا ہے۔

جواب دیں

This site is protected by wp-copyrightpro.com