یونان سے تعلق رکھنے والے دو فوجیوں کو ترک عدالت نے رہا کردیا۔

انقرہ سے موصول ہونے والی اطلاعات کے مطابق ترکی کی سپریم کورٹ نے یونان سے تعلق رکھنے والے گرفتار شدہ دو فوجیوں کو رہا کردیا۔ یاد رہے کےان فوجیوں کو ۔5 ماہ پہلے گرفتار کیا گیا تھا۔

ان فوجیوں پر الزام تھا کہ انہوں نے ترکی کی سرحد میں داخل ہو کر جاسوسی کرنے کی کوشش کی ہے لیکن آج عدالت میں یہ ثابت نہ ہوسکا تو عدالت نے انہیں رہا کردیا۔

ان فوجیوں کو لینے کے لیے وزیراعظم کا خصوصی جہاز جارہا ہے جس میں وزیر خارجہ کا تروگالوس ان کے استقبال کے لیے جا رہے ہیں۔جبکہ تھیسلونیکی میں ترک فوج ان جوانوں کو یونان کے وزیر دفاع کامینوس کے حوالے کرے گی۔اس حوالے سے وزیراعظم کے دفتر کو پہلے ہی آگاہ کیا جا چکا ہے۔

آج صبح عدالت نے کیس کی سماعت کی جس کے دوران عدالت اس نتیجے پر پہنچی کہ یہ دو جوان غلطی سے سرحد پار پہنچے تھے جبکہ ان کے پاس سے موصول ہونے والے آلات جاسوسی کے لیے نہیں تھے۔

ذرائع سے موصول ہونے والی اطلاعات کے مطابق ان فوجیوں کی رہائی میں یونان کی اعلی قیادت نے اہم کردار ادا کیا اور خاص طور پر وزیر اعظم الیکسی چپراس نے ناٹو کے اجلاس کے د وران اردگان سے ملاقات میں یہ مسئلہ اٹھایا ۔اور آخرکار عدالت نے بھی ان نوجوانوں کو رہا کردیا۔

جواب دیں

This site is protected by wp-copyrightpro.com