مراکشی نیوی نے قریب ڈھائی سو مہاجرین کو ڈوبنے سے بچا لیا

جن مہاجرین کو بچایا گیا، وہ چھوٹی چھوٹی کشتیوں پر سوار ہو کر یورپ پہنچنے کی کوشش میں تھے۔ یہ مہاجرین ربر کی کشتیوں کے ذریعے شوریدہ سر بحیرہ روم کو عبور کرنا چاہتے تھے۔

بچائے گئے مہاجرین میں سے زیادہ تر کا تعلق براعظم افریقہ کے سب صحارا خطے کے ممالک سے ہے۔ ان مہاجرین کی تعداد مجموعی تعداد 242 بتائی گئی ہے۔ یہ افراد کمزور کشتیوں پر سوار تھے، جو پلاسٹک کی بنی ہوئی تھیں اور ان میں ہوا بھر کر پھُلایا گیا تھا۔ ایسی کشتیاں عموماً چھوٹے سفر کے لیے استعمال کی جاتی ہیں اور ان پر مقررہ اور محدود افراد کو سوار کیا جاتا ہے۔

پلاسٹک کی ہوا سے بھری ہوئی کشتیوں پر سوار ان افریقی مہاجرین کو بحیرہ روم کے علاقے آبنائے جبرالٹر میں شدید مشکلات کا سامنا تھا اور ایسے میں مراکشی نیوی نے انہیں ریسکیو کر لیا۔ آبنائے جبرالٹر ہی افریقی براعظم کو یورپ سے جدا کرتا ہے۔

مراکش نیوز ایجنسی کے مطابق جن دو سو بیالیس افراد کو بچایا گیا ہے، ان میں بارہ کم سن اور پچاس خواتین بھی شامل ہیں۔ ان افراد کو ریسکیو کرنے کے فوری بعد طبی امداد فراہم کی گئی اور پھر مراکشی سرزمین پر پہنچا دیا گیا۔ یہ امر اہم ہے کہ چند روز قبل ایک یونانی سیاحتی بحری جہاز نے ایک سو سے زائد مہاجرین کو سمندر برد ہونے سے بچایا تھا۔

افریقی مہاجرین کے لیے مراکش کا ملک یورپ پہنچنے کی پہلی منزل ہے۔ آبنائے جبرالٹر کا مشکل راستہ اختیار کرنے سے بھی یہ مہاجرین گریز نہیں کرتے۔ ان مہاجرین کو اس راستے پر عموماً انسانی اسمگلنگ میں ملوث افراد ڈالتے ہیں اور ایک خاص مقام پر پہنچ کر وہ کشتیوں سے سمندر میں کود جانے سے بھی گبھراتے نہیں کیونکہ ایسے افراد کو بچنے کے طریقے معلوم ہوتے ہیں۔

مراکش پہنچنے والے مہاجرین پھر اس کوشش میں بھی ہوتے ہیں کہ کسی طرح اسپین کی سرحد پر قائم خار دار باڑ کو موقع پار کر عبور کیا جائے۔ یہ باڑ سِبتنہ اور ملِیّا نامی ہسپانوی علاقوں کی سرحد پر قائم ہے۔ اس باڑ کی مسلسل نگرانی کی جاتی ہے لیکن مہاجرین اسے عبور کرنے کی کوششیں کئی مرتبہ کر چکے ہیں۔

رواں برس کے دوران اب تک پندرہ ہزار مہاجرین بحیرہ روم کے راستے اسپین پہنچنے میں کامیاب ہوئے ہیں۔ عالمی ادارہ برائے مہاجرت کے مطابق یورپ پہنچنے کی کوشش میں رواں برس دو سو سے زائد انسانی جانیں سمندر میں ڈوب کر ضائع ہو چکی ہیں۔

جواب دیں

This site is protected by wp-copyrightpro.com