فرانس میں پینشن اصلاحات کے خلاف عام ہڑتال، زندگی مفلوج

فرانس میں صدر ایمانوئل ماکروں کی پینشن اصلاحات کے خلاف ملازمین کی مختلف انجمنوں نے مشترکہ طور پر عام ہڑتال کی کال دی ہے۔ اس ہڑتال میں مختلف شعبوں کے لاکھوں افراد حصہ لے رہے ہیں.

فرانسیسی خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق اس ہڑتال میں اساتذہ، ملک بھر کے ٹرانسپورٹ ملازمین، محکمہ پولیس، وکلاء، ہسپتال اور ہوائی اڈوں کے عملے سمیت کئی دیگر شعبوں کے ملازمین حصہ لے رہے ہیں.

فرانس میں ملازمت سے سبکدوشی اور پینشن سے متعلق کئی قوانین ایسے ہیں، جو بہت پرانے ہو چکے ہیں اور ماکروں انتظامیہ ان میں اصلاحات کے لیے ایک جامع قانون وضع کرنا چاہتی ہے۔

مجوزہ اصلاحات میں یہ بھی شامل ہے کہ ملازمین کی یومیہ کارکردگی کی بنیاد انہیں پوائنٹ دیے جائیں اور اسی بنیاد پر ملازم کی مستقبل کی پینشن طے کی جائے گی۔ اس میں ریٹائرمنٹ کی عمر بڑھانے کی بھی تجویز ہے۔

فرانس میں ریٹائرمنٹ کی عمر 60 برس تھی، جو بعد میں 62 برس کر دی گئی لیکن ترقی یافتہ ممالک کے مقابلے میں یہ اب بھی بہت کم ہے۔ پوائنٹ کی بنیاد پر اگر کوئی شخص 64 برس کی عمر سے  قبل ریٹائر ہوتا ہے تو اسے پینشن کم ملے گی۔

جواب دیں

This site is protected by wp-copyrightpro.com